اردو فنڈا کے بہترین سلسلے اور ہائی کلاس کہانیاں پڑھنے کے لئے ابھی پریمیم ممبرشپ حاصل کریں

Results 1 to 2 of 2

Thread: فیضان اور فیضی

  1. #1
    Join Date
    Feb 2020
    Posts
    194
    Thanks Thanks Given 
    1
    Thanks Thanks Received 
    109
    Thanked in
    80 Posts
    Rep Power
    68

    Default فیضان اور فیضی

    فیضان اور فیضی
    قسط نمبر 01


    ذیشان مجھے معلوم ہے کے تو نے نہیں مارا
    میرے ماں باپ کو . . .
    لیکن خون تو تو انہی کا ہے نہ . . . .
    یہ کہہ کے میں نے بندوق اُس کی طرف سیدھی کر دی . . . . . .

    بہَت سال پہلے . . .




    یار پیچھے ہٹ نا مجھے دیکھنے دے اب . . .

    میں نے ہاشم عرف ہاشو کو پیچھے کیا اور
    خود درخت کے پیچھے سے سر نکال کے ہمارے
    گاؤں سے گزرنے والی چھوٹی سی نہر کی طرف
    دیکھا جہاں صغراں کپڑے دھونے کے بَعْد اپنی
    قمیض اتار رہی تھی . . . .

    اُس کے موٹے جِسَم پہ ڈھلکی ہوئی اس کی چھاتیاں ہی اس وقت میرے لیے بہَت پیاری سی چِیز تھے . . . .

    ہاشو : چل اب میری باری

    میں سائڈ پہ ہو گیا اور ہاشو نے پوزِیشَن
    سنبھل لی

    کیا کر رہی ہے اب وہ ؟
    میں نے بے تابی سے پوچھا . . . . .


    ہاشو : شلوار اتار رئی ہے . . . .

    میں : پیچھے ہٹ
    میں نے اسے پیچھے کر کے پِھر آگے ہوا
    صغراں نے ادھر اُدھر دیکھا اور کھڑے ہو کے
    جلدی سے شلوار اتاری اور پانی میں اتر گئی
    میں اس کی بہت بڑی اور پهلی ہوئى گانڈ کو
    دیکھ سکتا بس . . . .

    وہ نہر بس اتنی سی گہری تھی کے صغراں کی
    چھاتیاں تک ہی پانی تھا . . . .

    نہر میں اتر کے وہ اپنی چھاتیاں دھونے لگی . . .

    ہاشو : چل مجھے بھی دیکھنے دے نا یار
    اس کے کہنے پہ میں ایک طرف ہو گیا . . .

    میں اس وقت ساتھویں کلاس میں تھا . . .

    میرا نام فیضان ہے اور مجھے فیضی بلاتے ہے
    اور ہم پنجاب کے ایک گاؤں میں رہتے ہیں
    جو
    شہر سے بس آدھے گھنٹے کے فاصلے پہ ہے . . . .

    کہتے ہوں کے جب میں تین سال کا تھا تو میرے والدین کا ایک ایکسڈینٹ میں انتقال ہو گیا تھا . . . .

    پِھر مجھے میری پھپھو نے پالا جن کی اپنی
    کوئی اولاد نہیں تھی . . . .

    ہمارا خاندان کافی بڑا تھا . . .
    چار چچا اور تین پھپو . . .
    کچھ یہاں گاؤں میں ہی رہتے تھے
    کچھ ساتھ والے گاؤں میں . . .

    کچھ ساتھ والے شہر میں اور کچھ لاہور میں اور سب کے سب ہی خاصے امیر تھے
    پھپو نے مجھے بہت لاڈ اور پیار سے پالا تھا اور میں انہیں بوا کہہ کے بلاتا تھا . . . .

    کریکٹرز کے نام آگے ساتھ ساتھ بتاتا رہوں
    گا . . .


    اِس بار بھی گرمیوں کی چھٹیوں میں ہم
    خالہ کے گھر جا رہے ہیں . . . .
    ہاشو نے مجھے بتایا . . .

    میں :
    مجھے تو بوا اور بابا ( پھوپپا ) کہیں
    چھوڑتے ہے نہیں یار . .
    ایک دو دن کے لیے ساتھ ہی لے
    جاتے ہیں اور ساتھ ہی واپس . . . .

    اس وقت ہم اسکول جا رہے تھے . . .

    ہاشو : اوئے وہ دیکھ سمیرہ
    ہمارے اسکول کے ساتھ ہی لڑکیوں کا اسکول تھا . . . .

    سمیرہ میرے محلے کی لڑکی تھی اور نویں کلاس میں پڑھتی تھی . . . .

    وہ روز کی طرح مجھے دیکھ کے مسکرائی اور
    اپنے اسکول میں داخل ہوگئی . . . .

    میں : یہ مجھے پاگل لگتی ہے . . . .
    آویں ہنس دیتی ہے مجھے دیکھ کے جیسے میرے سر پہ سینگھ ہوں . . . . .

    ہاشو : ہاں مجھے بھی یہی لگتا ہے . . .

    پڑھائی کیسی جا رہی ہا فیضی پٹر
    بابا نے مجھ سے پوچھا . . . .

    میں : اچھی جا رہی ہے بابا . . . . .


    جاری ہے . . . . .

  2. The Following User Says Thank You to حیدر رضا For This Useful Post:

    abkhan_70 (09-02-2020)

  3. #2
    Join Date
    Feb 2020
    Posts
    194
    Thanks Thanks Given 
    1
    Thanks Thanks Received 
    109
    Thanked in
    80 Posts
    Rep Power
    68

    Default

    فیضان اور فیضی
    قسط نمبر 02

    بوا : میرے حمید ( میرے والد کا نام) کی
    طرح لائق ہا میرا فیضی . .
    پتہ ہا پتر حمید ہم بہن بھائیوں میں واحد تھا جو یونیورسٹی تک گیا اور . . . .

    بابا : چل اب رونے نا بیٹھ جانا
    بابا نے بوا کو ٹوکا . . .

    میں : وہ میں نے میچ کھیلنے جانا ہے . . . .

    بابا : یہاں اسکول کی گراؤنڈ میں ہے ؟

    میں : نہیں ساتھ والے گاؤں میں . .
    چچا سے بھی مل آؤں گا . . .

    بابا : چل اکرم کو ساتھ لے جا . .

    میں : ایک تو گاؤں سے باہر ہر جگه آپ کسی نا کسی کو میرے ساتھ بھیج دیتے ہیں . . .
    میں نے منه بنایا . . .

    بوا : اگر اکرم کو ساتھ نہیں لے کے جانا تو تو بھی نہیں جائے گا . . .

    میں : اچھا بھیجیں اسے ساتھ . . . .
    سارے اپنی سائیکل یا بائیک پہ جاتے ہیں اور مجھے آپ گاڑی پہ بھیجیں گیں اس اکرم کے ساتھ . . .
    کتنا عجیب سا لگتا ہے . . .
    بوا اور بابا ہنسنے لگی . . .

    بوا : ایک تو تیرے بابا تیری فکر کرتے ہے اور تو
    ناراض ہوتا ہے . . .
    بوا نے مجھے ساتھ لگایا . . .

    بابا : تو ہی تو ہے ہمارے پس اور ہے کیا ؟

    میچ کھیل کے میں تایا کی حویلی چلا گیا . . . .


    تایا بڑے سے کمرے میں لوگوں میں گرے
    بیٹھے تھے ہمیشہ کی طرح اور ساتھ ہے ان کے
    بیٹے بھی تھے
    میں ان سے مل کے اندر کی طرف آیا
    وہاں راحیلہ باجی اور سجیلا باجی تائی کے ساتھ بیٹھی ٹی وی دیکھ رہی تھیں . . . .

    تایا کی دونوں بیٹیاں کالج میں پڑھتی ہیں اور
    سخت پردے میں آتی جاتی ہیں . . . .

    اس وقت بھی گھر میں ہونے کے باوجود دونوں نے چادر لپیٹے ہوئی تھی . . .

    تائی : آج تو بڑی بات ہے کے تم اکیلے آگیے ہو . .

    میں : نہیں اکرم ہے ساتھ

    راحیلہ : چھوٹا بچا ہے نا اسلئے اکیلے نہیں
    بھیجتے اسے کہیں . . . .
    وہ دونوں ہنسنے لگی . . .

    میں : بس کیا کرو باجی بوا اور بابا مانتے ہی نہیں . . . .

    تائی : ہاں کچھ زیادہ ہی ڈرپوک ہے شاید . . .

    مجھے تائی کی یہ بات بلکل بھی اچھی نہیں لگی . . .

    میں : میری بوا اور میرے بابا ایسے نہیں
    ہیں . . .
    پورے گاؤں میں رُعْب ہے بابا کا . . .

    سجیلا : ارے یہ تو برا مان گیا . . .
    بتاؤکیا کھاؤ گے . . . .

    میں : کچھ نہیں . .
    میں چلتا ہوں بس کافی دیر ہوگئی ہے بوا پریشان ہو رئی ہوں گی . . . .

    میں اٹھا تو تایا اندر آگئے ۔ ۔ ۔

    تایا : ابھی بیٹھو كھانا کھا کے جانا . . . .



    میں : دیر ہوگئے ہے

    تایا : نہیں كھانا کھا کے جاؤ
    تایا نے اِس بار حکم دیا . . .

    تائی كھانا لینے چلی گئی اور تایا واپس بیٹھک میں چلے گئے . .

    سجیلا : اور ہیرو . . .
    کیسے ہو

    اس نے مجھے اُوپر سے لے کر نیچے تک دیکھا
    راحیلہ اور سجیلا دونوں ہی خوبصورت تھی
    مگر راحیلہ بڑی ہونے کی وجہ سے ذرا کم
    شوخ تھی سجیلا کی نسبت . . .

    میں : باجی میں کب ہیرو ہوں

    راحیلہ : بڑے ہوگئے ہو تم

    میں : نہیں جی ساٹھویں میں ہوں ابھی تو

    سجیلا : ہاں تو تمھارے بابا نے داخل بھی تو چھ سال کی عمر میں کروایا ہے نا تمہیں . .

    مجھے اِس بات کا مقصد سمجھ نہیں آ رہا
    تھا سو ماں چُپ ہو گیا . . . .

    میں بار بار ٹائم دیکھ رہا تھا اور تھوڑی دیر
    بَعْد ان کے فون کی گھنٹی بجی . . .

    راحیلہ بات کر کے واپس آئی . . . .

    راحیلہ :
    بوا کا فون تھا تمہارا پوچھ رہی تھی
    میں نے بتا دیا کے ابو نے کہا ہے کے كھانا کھا
    کے جائے . . . .

    سجیلا : ویسے تم ہمارے گھر اتنا کم کم کیوں
    آتے ہو ؟

    میں : یہاں پہ سب تو بڑے بڑے ہے

    راحیلہ نے سجیلا کی طرف دیکھا . . . .

    جاری ہے . . . .

  4. The Following User Says Thank You to حیدر رضا For This Useful Post:

    abkhan_70 (09-02-2020)

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •