جتنے دوستوں کی ممبرشپ ری سٹور ہونی تھی ہو گئی اب مزید کسی کی ممبرشپ ری سٹور نہیں ہو گی. اب جس کو ممبرشپ چاہے اس کو فیس دینا ہو گی. پندرہ سو یا پندرہ ڈالر ایک سال کے لئے
Contact
[email protected]

اردو فنڈا کے بہترین سلسلے اور ہائی کلاس کہانیاں پڑھنے کے لئے ابھی پریمیم ممبرشپ حاصل کریں . نیا سلسلہ بستی بستی گاتا جائے بنجارا ایڈمن کے قلم سے

Page 49 of 82 FirstFirst ... 3945464748495051525359 ... LastLast
Results 481 to 490 of 814

Thread: وہ بھولی داستان جو پھر یاد آگئی

  1. #481
    Join Date
    Jul 2010
    Posts
    5
    Thanks Thanks Given 
    0
    Thanks Thanks Received 
    6
    Thanked in
    4 Posts
    Rep Power
    10

    Default

    very nice story........... Maza a jaa hay parh kar

  2. The Following User Says Thank You to Baba Guru For This Useful Post:

    Xhekhoo (31-12-2018)

  3. #482
    Join Date
    Aug 2008
    Location
    Islamabad
    Posts
    123
    Thanks Thanks Given 
    401
    Thanks Thanks Received 
    80
    Thanked in
    42 Posts
    Rep Power
    34

    Default

    Boht zabardast update hai. Maza hi agaya. Shop bhi chal pari hai, abb agay dekhain kia hota hai.

  4. The Following User Says Thank You to Lovelymale For This Useful Post:

    Xhekhoo (30-12-2018)

  5. #483
    Join Date
    Oct 2018
    Location
    In husband ہارٹ.
    Posts
    110
    Thanks Thanks Given 
    950
    Thanks Thanks Received 
    207
    Thanked in
    93 Posts
    Rep Power
    13

    Default

    ... شیخو جی


    مزہ a gaya اپڈیٹ ka.

    ZABBARDAST ZABBARDAST ZABBARDAST ZABBARDAST ZABBARDAST

    Keep it up...
    سیکسی لیڈی

  6. The Following 2 Users Say Thank You to MamonaKhan For This Useful Post:

    windstorm (31-12-2018), Xhekhoo (30-12-2018)

  7. #484
    Join Date
    Nov 2018
    Posts
    341
    Thanks Thanks Given 
    407
    Thanks Thanks Received 
    2,124
    Thanked in
    334 Posts
    Rep Power
    189

    Default Update no 208..??



    مہری اپنے ہاتھوں میں چہرہ چھپائے لیٹی ہوئی تھی اور میں اس کی ٹانگوں کے درمیان گھٹنوں کے بل بیٹھا اسکی اداوں کو دیکھ رہا تھا۔۔
    مہری نے اپنے چہرے دونوں ہاتھ اسطرح رکھے ہوے تھے کہ اسکی کہنیاں مموں کو چھپاے ہوے تھیں ۔۔
    میں کچھ دیر بیٹھا مہری کے جسم کے ایک ایک اعضا کو غور سے دیکھتا رھا ۔
    مہری کے جسم کا ہر اعضاء قابل تعریف تھا ۔۔
    چھتیس سائز کے گول مٹول تنے ہوے ممے پتلی کمر اندر کی طرف پیٹ پیچھے کو نکلی گول مٹول گانڈ گلابی رنگت پورے جسم پر بالوں کا نام نشان نہیں ریشم کی طرح ملائم سکن ۔۔۔۔۔
    اس قدر سیکسی فگر کے انگ انگ کو چوم چوم کر بھی دل نہ بھرے ۔۔۔
    میں نے مسکراتے ھوے گھٹنوں کے بل بیٹھے ھی پینٹ کی بیلٹ کھولی اور پھر ہک کھول کر کھڑا ھوا اور انڈرویر سمیت ھی پینٹ نیچے کر کے اتار دی اور مہری کے سامنے تنے لن کے ساتھ کھڑا تھا ۔۔۔
    مہری آنکھوں کے اوپر رکھی انگلیوں کو کھول کر انگلیوں کی دراڑ میں میرے لن کو دیکھ رھی تھی ۔۔۔
    میں پھر گھٹنوں کے بل بیٹھا اور مہری کے گھٹنوں کو پکڑ کر مہری کی ٹانگیں کھول دیں مہری نے جلدی سے ہاتھ اپنے چہرے سے ہٹاے اور میری طرف دونوں ہاتھ کر کے ہلاتے ہوے بولی no no no no
    میں نے کہا کیا ہوا مہری۔۔۔۔۔
    مہری سر اوپر اٹھا کر آنکھیں پھاڑے میرے تنے ہوے لن کو دیکھنے لگ گئی جو پھنکاریں مارتا ھوا مہری کی چھوٹی سی پھدی کو گھور رھا تھا ۔۔۔
    مہری بولی nnnnno
    یاسر تمہارا اتنا بڑا ھے مجھ سے برداشت نہیں ہونا ۔۔
    اس دن جو میرا حال ہوا تھا یاد ھے نہ ۔۔۔
    میں مہری کے اوپر جھکا اور اسکے ہونٹوں کے پاس ہونٹ لیجا کر بولا ۔
    جان اس دن پہلی دفعہ کیا تھا اور تم ورجن تھی اس لیے درد ھوا تھا ۔
    پہلی دفعہ جب سیل ٹوٹتی ھے تو درد ھوتا ھے ۔۔
    اسکے بعد مزے ھی مزے ہیں۔۔۔
    مہری بولی یاسر مجھے ڈر لگ رھا ھے اتنا بڑا اندر کیسے جاے گا ۔۔
    میں نے کہا جیسے پہلے لیا تھا۔۔۔
    مہری جلدی سے اپنی نکی جئی پھدی کو چھپاتے ھوے بولی ۔۔
    نہ بابا نہ ۔۔
    مجھے وہ دن بھولا نہیں جب ایک ہفتہ میرا بخار نہیں اترا تھا ۔۔
    اور مجھے پتہ ھے کیسے گھر والوں سے چھپایا تھا ۔۔
    مما کو تو جیسے شک ہوگیا تھا بڑی مشکل سے مما کو میں نے مطمئن کیا تھا کہ مینسز کی وجہ سے میری طبعیت خراب ہوئی ھے ۔۔
    اور اب پھر وہ ھی کرنے لگے ھو ۔۔
    میں نے مہری کے ہاتھوں کو پکڑ کر اسکی پھدی سے ہٹایا اور بولا ۔۔
    جان اب نہ تو خون نکلے گا نہ ھی درد ھوگی ۔۔
    مجھ پر یقین رکھو ۔۔۔
    مہری بولی تو اگر کچھ اور ھوگیا تووووووو۔
    میں نے کہا کیا مطلب ۔۔
    مہری بولی اگر میں پریگنٹ ھوگئی تووووووو۔
    میں نے کہا یار پریگنٹ تب ھوگی جب مین اندر فارغ ھوں گا ۔۔۔خالی اندر کرنے سے تھوڑا پریگنٹ ھوجاوگی ۔۔۔
    مہری بولی یاسر مجھے ڈر لگ رھا ھے ۔۔
    مین نے لن کو پکڑ کر ٹوپے کو مہری کی پھدی کے ساتھ لگا کر پھدی کے لبوں کے ساتھ مسلتے ھوے کہا ۔۔
    جان تم بے فکر رھو میں وعدہ کرتا ھوں کہ درد نہیں ہونے دوں گا بلکہ پیار سے اور آرام آرام سے اندر کروں گا۔۔۔
    مہری بولی ۔
    اگر مجھے درد ہوئی نہ تو دیکھنا پھر تمہیں چھوڑوں گی نہین ۔۔۔
    میں نے ٹوپے کو مہری کی پھدی کے دانے کے ساتھ مسلتے ھوے کہا ۔۔
    جان تھوڑی سی درد تو ہوگی پھر دیکھنا تم خود کہو گی کے سارا اندر کرو۔۔۔
    یہ کہتے ھوے میں نے ٹوپے کو اچھی طرح پھدی سے نکلنے والے پانی سے گیلا کرلیا تھا ۔
    اور ٹوپے کو پھدی کے لبوں میں رکھ کر ہلکا سا پُش کیا تو ٹوپا پھدی کے اندر چلا گیا ۔۔
    مہری کچھ کہنے ھی لگی تھی کہ ٹوپا پھدی کے اندر گھستا محسوس کرتے ھی
    او او او او اوئییییییییییی کرنے لگ گئی ۔۔
    میں مہری کے اوپر لیٹ گیا اور اسکے بالوں کو سہلاتے ھوے اسکی آنکھوں دیکھتے ھوے کہا ۔۔
    درد ھوا مہری بولی تھوڑا سا ھوا ھے ۔
    میں نے لن کو ہلکا سا اور پُش کیا تو پھدی کے اندر تھوڑا سا لن گھس گیا مہری نے دونوں ھاتھ میرے سینے پر رکھتے ھوے آنکھیں بند اور چہرہ اوپر کو کرتے ھوے اووو اووئییییییییی درد ہور ھا ھے یاسسسسررررررر ۔۔
    میں نے لن اتنا ھی اندر رہنے دیا اور مہری کے ہونٹوں کو چوسنے لگ گیا کچھ دیر بعد میں نے مہری کے ہونٹوں سے اپنے ہونٹ ہٹاے اور بولا ۔
    جان اب تو درد نہیں ھو رھا ۔۔
    مہری بولی اب کم ھوگیا ھے ۔۔۔
    میں نے پھر ہلکا سا لن کو پُش کیا تو آدھا لن مہری کی پھدی میں اتر گیا اور مہری کی پھدی نے میرے آدھے لن کو اپنی گرفت میں بھینچ لیا مہری کی پھدی گیلی ھونے کے باوجود بہت ٹائٹ تھی ۔۔
    جیسے ھی لن آدھا آندر گھسا ۔۔
    مہری نے میرے سینے سے ہاتھ ہٹاے اور میرے کندھوں کو ذور سے پکڑا اور پوری آنکھیں کھول کر
    ہائیییییییییی کیا اور با بس بس بس بس بس اس سے ذیادہ نہیں ۔
    کہنے لگ گئی ۔۔
    میں نے کہا ۔۔
    جان برداشت کرو بس کچھ ھی دیر میں تمہیں مزہ انے لگ جاے گا ۔۔
    مہری درد سے سر دائیں بائیں مارتے ھوے بولی نہیں یاسرررر بہتتتت درد ھورھا ھے پلیز ہلنا نہ ۔۔۔
    میں نے کہا اچھا جان نہیں
    ہلتا ۔
    تم اپنے آپ کو نارمل کرو کچھ بھی نہیں ہوتا بس ایک دفعہ سارا اندر لے لو ۔۔
    پھر درد نہیں ھوگا ۔۔۔
    مہری بولی یاسررررر مجھ سے اتنا بھی برداشت نہیں ھورھا ۔۔۔
    میں آدھا لن ھی اندر کیے ھوے رکا رھا ۔۔۔
    مہری بلکل ساکت لیٹی ھوئی تھی اور اففففففف اففففففف ہااااااااا کررھی تھی ۔۔
    کچھ دیر اسی حالت میں میں مہری کے اوپر لیٹا رھا ۔۔
    اور جب میری نارمل ہوئی تو میں نے کہا ۔
    جان اب درد کم ھوا ۔۔
    مہری نے اثبات میں سر ہلایا ۔۔
    تو میں نے کہا جان ایک ھی دفعہ سارا کردوں ۔
    بس ہلکی سی درد ھوگی ۔۔۔
    مہری بولی یاسر مجھے کچھ ھو نہ جاے ۔
    میں نے مہری کے ہونٹوں کو چوما اور بولا
    جان مجھ پر بھروسا رکھو ۔۔۔
    مہری بولی یاسر میرے ساتھ لگ جاو اور مجھے کس کر اپنی بانہوں میں لے لو۔۔
    میں نے مہری کی کمر کے نیچے دونوں بازوں ڈالے اور مہری نے میری کمر کے گرد بازوں جا احصار باندھ لیا ۔
    میں نے مہری کے یونٹوں پر ہونٹ رکھے اور اسکا اوپر والا یونٹ منہ ڈالا اور مہری نے میرا نیچے والا ہونٹ منہ ڈالا ۔
    اور ہم دونوں ایک دوسرے کے یونٹ چوسنے لگ گئیے ۔
    مہری کا دھیان اب کسنگ کی طرف ھوچکا تھا اور وہ مزے سے کسنگ کری جارھی تھی اور ساتھ ساتھ نیچے سے آہستہ آہستہ گانڈ اٹھا کر لن اندر باہر کرنے لگ گئی ۔۔
    میں نے لوھا گرم دیکھا تو مہری کے ہونٹ کو منہ کے اندر کھینچا اور ساتھ ھی ہلکے جاندار گھسے سے سارا لن پھدی کی گہرائی میں اتار دیا ۔۔
    مہری کی آنکھیں پھٹی اسکی چیخ کو میں نے اپنے منہ کے اندر ھی سما لیا ۔
    مہری نے میری کمر پر اپنے نوکیلے ناخن گاڑھ دیے ۔۔
    اور سر ادھر ادھر کرتے ھوے اپنے ہونٹ میرے ہونٹوں کی قید سے چھڑوانے کی کوشش کرنے لگی ۔۔
    مہری کا ریکشن اسکی تکلیف کی گواہی دے رھا تھا ۔۔
    مہری کی انکھیں نم ہونا شروع ھوگئیں ۔۔
    میں گھسا مار کر مہری کو اپنے بازوں میں جکڑے اپنے جسم کے ساتھ چپکاے مہری کے اوپر لیٹا ھوا تھا ۔۔۔
    میرے لن کو مہری کی گرم پھدی نے بری طرح جکڑا ھوا تھا ۔
    ماہی کی پھدی اتنی گرم تھی کہ مجھے لگ رھا تھا کہ بس میں ابھی فارغ ہوجاوں گا ۔۔۔
    ویسے بھی پھدی مارے مجھے کافی دن ھوگئے تھے ۔۔
    مگر پھر بھی اپنا دھیان ادھر ادھر بھٹکا کر خود پر کنٹرول کرنے میں کافی کامیاب ھو چکا تھا ۔۔۔
    آخر کچھ ھی دیر میں لن نے پھدی کی ساری گرمی اپنے اندر سمو لی اور لن بھی اب ریلکس ھوکر پھدی کے اندر پھنسا ھوا تھا مزید
    کچھ دیر بعد مہری نارمل ہوئی ۔۔
    اور مجھے گھورتے ھوے بولی ۔۔
    بہت گندے ھو تم یاسر ایسے بھی کوئی کرتا ھے کیا ۔
    میری جان نکال کے رکھ دی ۔۔
    میں نے مہری کی گالوں کو چومتے ھوے کہا ۔۔جان بس جتنی درد ھونی تھی ھوگی اب مزے ھی مزے ہیں ۔۔۔
    مہری منہ بسورتے ھوے بولی مجھے نہیں لینا ایسا مزہ ۔۔
    میں نے کہا جان کچھ دیر رکو تو سہی اب ھی تو اصل مزے شروع ھونے ھے ۔۔۔۔
    مہری میری بات سن کر خاموش ھوگئی ۔۔
    میں نے کہا جان اب درد تو نہیں ھے ۔
    مہری بولی جلن ھورھی ھے درد تو ختم ھوگی ۔
    میں نے کہا بس اب یہ بھی ختم ھوجاے گی اور اسکے ساتھ ھی
    میں نے آہستہ آہستہ گھسے مارنے شروع کردیے ۔۔
    مہری اوہہہہہہ آہہ اہ آہ ۔
    آرام سے آہ آہ آہ آہ ۔
    کرنے لگ گئی ۔
    میرے گھسوں کی سپیڈ آہستہ آہستہ سے تیز ہونا شروع ھوگئی اور میں نے مہری کے کمر کے گرد سے بازو بھی نکال لیے اور اس کے اوپر سے اٹھ کر گھٹنوں کے بل ھوگیا اور مہری کی ٹانگوں کو پکڑ کر تھوڑا اوپر کر کے گھسے مارنے لگ گیا ۔۔
    مہری اب لن کا مزہ لیتے ھوے سسکیاں بھرنے لگ گئی ۔۔
    میں نے بھی گھسے مارنا تیز کردیے مہری کی پھدی اب کافی گیلی ہو چکی تھی جس کی وجہ سے لن آسانی سے اندر باہر ھورھا تھا پھدی کی ٹائٹنس بھی کم ہوگئی تھی ۔
    میرے گھسوں سے مہری کے ہلتے ممے اور اسکی سسکاریاں میرے اندر مذید جوش پیدا کیے جارھیں تھی ۔۔
    اچانک مہری کا جسم اکڑنا شروع ھوا اور ساتھ ھی مہری کی انکھیں بند ھوگئیں اور مہری پر خمار چھا گیا اور وہ خماری میں yes yes yeses fuck me fuck me fast pass fast love u love u love u fuck fuck fuck
    کرتے ھوے ایک دم کانپنے لگی اور مہری کی پھدی نے ایک بار پھر میرے لن کو شکنجے میں لیا اور مہری نے گانڈ کو اٹھا کر لن کو جڑ تک اندر لیا اور پھر میرے لن کے ٹوپے پر مہری کی پھدی کے اندر منی کی دھاریں گرنے لگ گئی ۔۔
    مہری فل مستی میں چہرہ چھت کی طرف سے پیچھے کو لے گئی اور لمبے لمبے سانس لینے لگ گئی میں رک کر مہری کی طرف دیکھتے ھوے اس کے فارغ ہونے کا انجواے کرنے لگ گیا۔
    جب مہری ٹھنڈی ہوئی تو آنکھیں کھول کر میری طرف دیکھنے لگ گئی میں نے مسکرا کر کہا ۔مزہ آیا۔۔
    مہری بولی مجھے نہیں پتہ اور ساتھ ھی دونوں ہاتھوں سے اپنے چہرے کو چھپا لیا ۔۔
    میں اسکی معصومیت دیکھ کر مسکرایا اور پھر اسکی ٹانگوں کو کندھوں پر رکھا اور گیلی پھدی میں ھی گھسے مارنے لگ گیا ۔
    اور چند گھسوں کے بعد ھی میرے لن کی نسیں پھولنا شروع ہوئیں اور میں نے آخری جاندار گھسا مارا جس سے مہری کا سارا جسم ہلا اور مہری نے ھاےےےےےےےےے کیا اور میں نے جھٹکے سے لن باھر نکالا اور مہری کے پیٹ کی طرف لن کا منہ کردیا ۔
    میرے لن سے پہلی پچکاری مہری کے مموں پر پڑی اور پھر پچکاریاں مموں سے پیچھے آتی ہوئی مہری کی پھدی پر رکیں اور لن سے قطرے نکل نکل کر مہری کی پھدی پر گرنے لگ گئے ۔۔
    مہری بھی بڑے غور سے لن سے منی نکلتی دیکھ رھی تھی ۔۔
    جیسے ھی لن خالی ھوا تو میں نڈھال ھوکر مہری کے ساتھ بیڈ پر گر پڑا ۔۔۔
    اور لمبے لمبے سانس لینے لگ گیا۔۔۔
    مہری جلدی سے اٹھی اور ننگی ھی واش روم کی طرف بھاگ گئی ۔۔
    میں مہری کی ہلتی ھوئی تھرتھراتی گانڈ کو پیچھے سے دیکھنے لگ گیا ۔۔۔
    اور مہری میری نظروں سے اوجھل ہوگئی ۔۔۔
    میں ٹھنڈی اہہہہہہہہ بھر کر آنکھیں موند کر ٹانگ پر ٹانگ رکھے لیٹ گیا ۔۔۔
    کافی دیر بعد مہری نے میری ٹانگ کو ہلاتے ھوے مجھے آوازدی کہ یاسرررررمیں نے آنکھوں سے بازو ہٹایا اور مہری کی طرف دیکھا جو نہا کر کپڑے پہنے گیلے بالوں کو کندھوں پر پھیلاے کھڑی مسکرا رھی تھی ۔
    مجھے آنکھیں کھولتے دیکھ کر مہری بڑی ادا سے گیلے بالوں کو ہاتھوں سے جھٹکتے ھوے بولی ۔
    سوگئے تھے ۔۔
    میں نفی میں سر ہلاتے ھوے اٹھ کر بیٹھ گیا ۔۔
    تو مہری بولی اٹھو نہا کر کپڑے پہن لو میں اتنی دیر چاے بناتی ھوں ۔۔
    میں نے ہمممم کیا اور کپڑے پکڑ کر واش روم کی طرف چل دیا ۔۔
    کچھ دیر بعد نہا کر کپڑے پہن کر میں کمرے میں آگیا تو مہری چاے لیے ھوے کمرے میں داخل ہوئی ۔۔
    اور بیڈ پر ھی چاے کی ٹرے رکھ دی ۔۔
    میں نے چاے کا کپ اٹھایا اور چسکیاں لیتے ھوے مہری کی طرف دیکھنے لگ گیا ۔
    مہری بولی ۔۔

    یاسر دکان کیوں بدل لی ۔۔
    میں نے مسکرا کر کہا جناب وہ میری اپنی دکان ھے میں نے اب اپنا کام شروع کرلیا ھے ۔۔
    مہری بولی واوووووو گڈ یار کب شروع کی دکان ۔۔
    میں نے کہا پندرہ بیس دن ھی ھوے ہیں ۔۔
    مہری بولی ۔
    مبارک ھو یار بہت خوشی ھوئی مجھے بہت اچھی دکان بنائی ھے ۔۔
    اتنی اچھی سیٹنگ تو مما کی بوتیک کی بھی نہیں ھے ۔
    میں نے شکریہ ادا کیا ۔
    اور پھر میں نے مہری سے اسد کا پوچھا کہ وہ لاہور کیا کرنے گیا ھے ۔۔۔
    مہری ایکدم سنجیدہ ھوگئی ۔۔
    میں نے مہری کو پریشان دیکھ کر کہا کیا ہوا مہری پریشان کیوں ھوگئی ھو۔۔۔
    مہری بولی کچھ نہیں بس ایسے ھی ۔۔۔
    میں کھسک کر مہری کے قریب ھوا اور اسکا ھاتھ پکڑ کر دباتے ھوے بولا ۔
    مہری کچھ تو ھے جو تم مجھ سے چھپا رھی ھو ۔۔
    مہری سر جھکا کر بیٹھی ھوئی تھی اچانک مہری کی آنکھوں سے ٹپ ٹپ آنسو گرنے لگ گئے ۔۔۔
    میں مہری کی حالت دیکھ کر پریشان ھوگیا اور چاے ہکڑے کھڑا ھوا اور کپ کو بیڈ کے سائڈ ٹیبل پر رکھا اور ۔
    مہری کے پاس بیٹھتے ھوے اسکی گالوں کو پکڑ کر اسکا چہرہ اوپر کر کے اپنی طرف کیا تو مہری انکھیں بند کیے ھی روے جارھی تھی ۔
    میں نے اسکی گالوں کو ہلاتے ھوے کہا ۔
    مہریییییی ۔
    میری نے پلکوں کو اٹھایا تو اسکی بھیگی سرخ آنکھیں بہت سے سوال پیدا کررھیں تھی ۔۔
    میں نے کہا مہری یار کیا ھوا اسد کو ایسا کیا ھے جو مجھ اے تم چھپا رھی ھو ۔۔
    مہری بولی یاسر ہم اسد کی وجہ سے بہت مشکل میں پھنسے ھوے ہیں ۔۔۔
    میں نے کہا ہوا کیا ھے یار کچھ بتاو گی بھی ۔۔۔۔۔۔
    مہری اپنے انسوں صاف کرتی ھوئی بولی ۔۔۔
    یاسر اسد غلط سوسائٹی میں بیٹھنے لگ گیا تھا ۔
    اور کوئی اکری نامی بدمعاش کے ڈیرے پر دن رات رہتا تھا ۔
    اور ہر وقت نشے کی حالت میں رہتا تھا شراب پی کر گھر آتا اور آکر مما کے ساتھ بتمیزی کرتا تو کبھی مجھے مارتا ۔
    کہ اچانک اسکے دوست اکری کے ڈیرے پر اسکے کسی دشمن نے حملہ کیا اور کافی فائرنگ ہوئی ۔۔
    جس میں اکری کے اور مخالف پارٹی کی بندے مرے ۔
    اور اس دن سے اسد ۔۔۔۔۔۔۔
    مہری پھوٹ پھوٹ کر رونے لگ گئی ۔۔۔
    میں نے کہا کیا اس دن سے مطلب کیا ھے اسد کہاں ھے ۔۔
    مہری میرے دونوں ہاتھ پکڑ کر اپنے چہرے پر رکھتے ھوے روتے ھوے نفی میں سر ہلاتے ھوے بولی پتہ نہیں کدھر گیا ھے ۔۔
    نہ اسکا کوئی پتہ ھے نہ ھی اسکے دوست اکری کا ۔۔۔
    میں نے کہا ۔
    تم لوگوں نے پتہ نہیں کروایا ۔۔۔
    مہری بولی ۔۔ہمیں تو پتہ ھی نہیں تھا وہ تو پولیس ہمارے گھر ائی تھی اسد کو تلاش کرنے تو تب ہمیں ساری صورتحال کا پتہ چلا مما نے بہت کوشش کی مگر ان دونوں کا کوئی پتہ نہیں ۔۔۔
    پولیس بھی ان دونوں کو تلاش کررھی ھے ۔۔
    انپر قتل کا کیس ھے ۔۔۔
    اور جن کے بندے مرے ہیں وہ بھی بہت بڑے بدمعاش ہیں ۔۔۔
    انکے بندے بھی ہمارے گھر آے تھے ۔۔۔
    اور مما کو دھمکیاں دے کر گئے تھے کہ ۔
    اسد کو زندہ نہیں چھوڑیں گے ۔۔۔
    میں نے کہا یار اتنا کچھ ھوگیا اور مجھے تم نے بتانا بھی مناسب نہیں سمجھا ۔۔۔
    مہری بولی کیسے بتاتی ۔۔
    میں تو ایک مہینہ گھر سے ھی نہیں نکلی ۔۔۔
    میں نے تو چار پانچ دن پہلے کالج جانا شروع کیا ھے وہ بھی میرے فائنل ائیر کے پیر ھورھے ہیں اور پھر میں نے کالج بھی نہیں جایا کرنا ۔۔
    میں تو چھپ کر کالج جاتی ھوں ۔۔۔
    میں سر پکڑ کر بیٹھ گیا ۔۔
    میں نے کچھ دیر بعد کہا۔
    اسد کہاں ھے ۔۔ اور یہ کب ھوا سب ۔
    مہری بولی ایک مہینہ سے اوپر ھوگیا ھے ۔
    اور اسد کا کسی کو بھی علم نہیں اور اس کنجر بےغیرت کتے اکری کا بھی کوئی پتہ نہیں ۔۔۔
    میں نے کہا ۔
    لڑائی کس وجہ سے ہوئی تھی ۔
    مہری بولی مجھے جہاں تک علم ھے کسی لڑکی کا چکر تھا ۔۔
    اور وہ لڑکی شہر کے کسی ایم پی اے کی بیٹی تھی اس کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی یا پتہ نہی. کچھ اور تھا ۔۔
    اصل بات کا مما کو پتہ ھے ۔
    میں نے مما سے بہت پوچھا مگر مما نے مجھے ٹال مٹول کردیا۔۔۔
    میں نے کہا ۔
    جن کی لڑکی تھی وہ لوگ دوبارہ تمہارے گھر نہیں آے ۔۔
    مہری روتے ھوے بولی ۔
    وہ تو مجھے اٹھا کر لیجانے کے لیے آے تھے ۔
    مگر مما کے کوئی تعلق والے ہیں جن کا تعلق اس ایم پی اے کے ساتھ تھا ۔
    انہوں نے بیچ میں پڑ کر ہماری جان بخشوائی مگر انہوں نے اسد کو معافی نہیں دی اور مما کے جو تعلق والے تھے انہوں نے ایک ہفتہ پہلے ہمیں گارنٹی دی کہ تم بے فکر ھوکر جدھر مرضی جاو تم ماں بیٹی کی طرف وہ لوگ آنکھ اٹھا کر بھی نہیں دیکھیں گےط۔
    مگر اسد کے بارے میں ہم کچھ نہیں کہہ سکتے اگر آپ لوگوں کا اس سے رابطہ ھو بھی تو اسکو کہنا اس شہر میں بھول کر بھی قدم نہ رکھے ۔۔۔
    مہری پھدی بلک بلک کر رونے لگ گئی ۔۔۔
    میں حیران پریشان بیٹھا اس ساری فلم کے بارے میں سوچنے لگ گیا کہ ۔۔
    یہ کیا ھوگیا ۔۔
    بدلہ تو میں نے لینا تھا مگر یہ کیا ھوا سارا کام ھی خراب ھوگیا ۔۔۔
    میں کچھ دیر مذید بیٹھا مہری کو دلاسا دیتا رھا اور پھر آنے کا کہہ کر نکلنے لگا تو مہری بولی یاسر مما کو نہ بتانا کہ
    تم گھر آے تھے یا تمہیں اسد کے بارے میں علم ھے کہ اسکے ساتھ کیا ھوا ھے ۔۔۔
    میں نے ہممممم کیا اور مہری کو بے فکر رہنے کا کہہ کر مہری سے ہگ کیا اور اس کے یونٹوں پر لمبی کس کی اور گھر سے نکل کر دکان پر پہنچا تو دکان پر رش لگا ھوا تھا اور جنید بےچارا اکیلا ھی پھنسا ھوا تھا مجھے دیکھ کر جیند مجھ پر برس پڑا کہ پتہ بھی ھے میں اکیلا ھوں مگر تم لاپرواہ ھوکر دکان سے غائب ھو۔۔۔
    میں نے سوری کیا اور کسٹمر کو ڈیل کرنے لگ گیا ۔۔

    کام میں مصروفیت کی وجہ سے پتہ ھی نہیں چلا کہ کب شام ڈھل گئی ۔
    جب سب کسٹمر چلے گئے تو میں کاونٹر پر آکر چئیر پر بیٹھ گیا ۔
    جنید میرے پاس آیا اور بولا کدھر گئے تھے اور وہ لڑکی کون تھی ۔
    میں نے کہا یار ایسی بات نہیں ھے جیسا تم سوچ رھے ھو وہ میرے دوست کی بہن تھی ۔
    جنید بولا ماما مینوں پُھدو نہ بنا ۔
    ایسے تو نہیں وہ تمہارے ساتھ غصے سے بات کررھی تھی میں نے کہا یار سچی ایسی بات نہیں ھے جیسا تم سوچ رھے ھو
    جنید بولا تو پھر سچی بات کیا ھے اتنی دیر کہاں لگا کر آے ھو ۔
    میًں نے کہا یار بریک تے پیر رکھ دسنا ایں سب ۔۔۔
    تو جنید بولا چلو رکھ دیا پیر بریک پر ۔
    اب بولو ۔۔
    میں نے کہا یار پہلے یہ بتا کہ اس دن جو تم کہہ رھے تھے کہ اکری بدمعاش کی بہن کے ساتھ تمہارا چکر چل رھا ھے.
    کیا واقعی تم سچ کہہ رھے ھو ۔۔
    جنید بولا ماما اوس کڑی نال اکری دی پین نال میرے چکر دا کی واسطہ ۔۔گل کیوں بدلن دیاں اے سدی طراں کے کہ دسنا نئی ۔۔۔
    میں نے جنید کی ٹانگ پر پاوں مارتے ھوے کہا ماما پیلے پوری گل تے سن لے فیر پونکیں ۔۔
    جنید بولا ۔
    چل دس فیر۔۔
    میں نے کہا پہلے بتا کہ تیرا اکری کی بہن کے ساتھ چکر ھے ۔۔
    جنید بولا ہاں ھے مگر صرف اکھ مٹکا ھی ھے ابھی بات چیت تک نہیں پہنچا۔۔
    میں نے کہا وہ رہتی کہاں ھے مطلب کے اکری کا گھر کدھر ھے اور تیرا اس کے ساتھ کیسے
    اکھ مٹکا چلا۔۔
    جنید بولا یار سیدھی بات کر تو کہنا کیا چاہتا ھے ۔
    میں نے کہا یار جنید ایک بہت بڑا مسئلہ بن گیا ھے ۔
    اور اس مسئلہ میں کتنی سچائی ھے یہ تب پتہ چل سکتا ھے کہ جب مجھے تیرے اور اکری کی بہن کے رلیشن کا تفصیل سے پتہ ھوگا ۔۔۔
    جنید ایکدم گبھرا گیا ۔
    اور میرے ساتھ والی کرسی پر بیٹھتے ھوے بولا
    او پھدی دیا کوئی نواں کٹا تے نئی کھول لیا میں تے ہالے اودا ہتھ پھڑ کے وی نئی ویکھیا۔۔۔۔
    میں نے کہا جا اوے لن لینی دیا ۔
    تینوں اپنی پے گئی اے ۔۔
    میں گل کوئی ہور کرن دیاں ایں ۔۔
    جنید بولا ۔
    یار تو پھر پوری بات ایک ھی دفعہ بتا دے پہیلیاں کیوں بھجوا رھا ھے ۔۔
    میں نے کہا اکری کی بہن کو ملے کتنے دن ھوگئے ہیں تمہیں ۔۔
    جنید کرسی سے اٹھتے ھوے اپنے سر کو پیٹتے ھوے بولا ۔
    او میرے باپ میں پونک تو رھا ہوں کہ میرا اسکے ساتھ صرف دیکھنے کی حد تک چکر ھے اور تو ملنے ملانے کی بھی بات کری جارھے ھو ۔
    میں نے جنید کی حالت کو نظر انداز کرتے ھوے کہا ۔
    چل یہ ھی بتا کہ اسے دیکھے کتنے دن ہوگئے ہیں ۔
    جنید بولا اسے دیکھے تو تین چار مہینے ھوگئے ہیں ۔
    میں نے جنید کو گھورتے ھوے کہا ۔
    پھدی دیا اے کیڑا چکر اے جیڑا معشوق نوں ویکھے ای تن مہینے ھوگئے نے ۔۔
    جنید بولا ۔۔
    یار ہمارے ہمسایوں کی شادی تھی تو وہ انکی شادی میں آئئ تھی تو وہاں اسکے ساتھ اکھ مٹکا ھوا ۔
    پھر اسکے بعد دو تین دفعہ وہ انکے گھر آئی تھی تو بس آنکھوں کے اشارے سے ایک دوسرے کو دیکھ کر ہنس دیتے تھے ۔۔
    مگر اب کافی دنوں سے وہ انکے گھر نہیں آئی ۔۔۔
    میں نے کہا تمہیں کیسے پتہ کہ وہ اکری کی ھی بہن ھے ۔
    جنید بولا میری کزن نے بتایا تھا ۔

    ہمارے ہمسایوں کی لڑکی اسکی دوست ھے تو اس وجہ سے اسکا ان کے گھر آنا جانا ھے میں نے کہا یار تم تو دکان پر ہوتے تھے پھر اسے کیسے دیکھتے تھے ۔۔
    جنید بولا ماما میری کزن بتا دیتی تھی کہ اس نے آنا ھے تو میں اس دن دکان سے چھٹی کرلیتا تھا اور میرا ہمسایوں کے گھر آنا جانا ھے میں بلاجھجھک انکے گھر چکا جاتا ھوں تو اسکو دیکھنے کے لیے بہانے سے چلا جاتا تھا ۔۔۔
    میں نے ہممممم کیا ۔۔
    تو جنید بولا اب بتا کیا بات ھے ۔۔
    میں نے کہا یار میرا ایک دوست ھے اسکا اکری کے ساتھ اٹھنا بیٹھنا ھے اکری کی کسی کے ساتھ لڑائی ھوئی ھے اور کافی خون خرابہ بھی ھوا ھے ااور میرا دوست بھی اس لڑائی میں ملوث ھے اور اس وقت میرا دوست اور اکری دونوں مفرور ہیں ۔
    اور یہ لڑکی میرے دوست کی بہن ھے ۔
    اور اس وقت یہ بیچارے بری طرح پھنسے ھوے ہیں ۔
    مخالف پارٹی بھی تگڑی ھے اپنا ایم پی اے ھے اکری کے مخالف ۔۔۔
    جنید میری بات سن کر پریشان ھوگیا ۔
    اور کچھ دیر سوچنے کے بعد بولا ۔
    تو اکری کی بہن کا اس معاملے میں کیا لینا دینا ۔
    میں نے کہا یار اس سے یہ پتہ کروانا تھا کہ واقعی یہ بات سچ ھے کہ ایسے مجھے ماموں تو نہیں بنا رھے ۔۔۔
    جنید بولا ھوسکتا ھے سچ ھی ھو اسکو کیا ضرورت ھے تم سے جھوٹ بولنے کی ۔
    جنید کی بات سن کر میں بھی سوچنے لگ گیا کہ مہری مجھ سے جھوٹ کیوں بولے گی ۔۔۔
    خیر میں نے جنید کو کہا کہ کسی طرح پتہ تو کروا اکری کی بہن سے کہ اکری کہاں مفرور ھے ۔
    جنید قہقہہ لگا کر ہنسا اور بولا ۔
    ماما پہلی بات تو یہ ھے کہ اکری کی بہن سے بات کرنا بہت مشکل ھے اور اگر ایسا ھو بھی جاے تو بھلا وہ کیسے سچ بتانے گی کہ اسکا بھائی کس جگہ گیا ھے ۔۔
    میں نے ہممممممم کیا۔۔
    اور جنید کو کہا
    ویسے گل تے تیری سُٹن والی نئی
    پر
    تیرے سُٹن والی اے ۔۔
    پھدی دیا اپنی کزن نوں کہ کے اپنی سیلی نوں کوے کہ اودے کولوں اگلوا لے ساری گل ۔۔
    کڑیاں اک دوجے نوں راز دیاں گلاں وی دس دیندیاں نے ۔۔
    جنید بولا ۔
    میں وعدہ نہیں کرتا کوشش کروں گا کہ بات بن جاے باقی ویکھی جاوے گی جو ھوے گا ۔۔۔



    وہ بھولی داستاں جو پھر یاد آگئی سچے دھاگوں سے جُڑی اردو فنڈا کی ایک لازوال سٹوری

  8. The Following 18 Users Say Thank You to Xhekhoo For This Useful Post:

    6686683 (31-12-2018), abba (08-01-2019), abkhan_70 (30-12-2018), Admin (31-12-2018), irfan1397 (31-12-2018), MamonaKhan (31-12-2018), mentor (01-01-2019), Mian ji (31-12-2018), Mirza09518 (31-12-2018), mmmali61 (30-12-2018), musarat (02-01-2019), omar69in (27-01-2019), sexliker909 (31-12-2018), shikra (31-12-2018), StoryTeller (19-02-2019), sweetncute55 (30-12-2018), waqastariqpk (30-12-2018), windstorm (31-12-2018)

  9. #485
    Join Date
    Oct 2010
    Posts
    30
    Thanks Thanks Given 
    16
    Thanks Thanks Received 
    87
    Thanked in
    29 Posts
    Rep Power
    13

    Default

    Yar yaa mehri wala kamal kiya bohat khawahish thii k is ki b choot khulay. Nasreen rahti hai yara.
    Khush raho. Abad o shaad raho

  10. The Following 2 Users Say Thank You to zoooon For This Useful Post:

    mmmali61 (31-12-2018), Xhekhoo (31-12-2018)

  11. #486
    Join Date
    Jan 2009
    Posts
    96
    Thanks Thanks Given 
    191
    Thanks Thanks Received 
    231
    Thanked in
    83 Posts
    Rep Power
    21

    Default

    Quote Originally Posted by zoooon View Post
    Yar yaa mehri wala kamal kiya bohat khawahish thii k is ki b choot khulay. Nasreen rahti hai yara.
    Khush raho. Abad o shaad raho
    مہری بیچاری تو پہلے بھی چد چکی

    آپ نے شائد غور نہیں کیا

  12. The Following User Says Thank You to mmmali61 For This Useful Post:

    Xhekhoo (31-12-2018)

  13. #487
    Join Date
    Dec 2009
    Posts
    50
    Thanks Thanks Given 
    80
    Thanks Thanks Received 
    100
    Thanked in
    48 Posts
    Rep Power
    16

    Default

    Wah Xhekhoo g zabardasr update di hai
    ...

  14. The Following User Says Thank You to sajjad334 For This Useful Post:

    Xhekhoo (31-12-2018)

  15. #488
    Join Date
    Nov 2018
    Posts
    341
    Thanks Thanks Given 
    407
    Thanks Thanks Received 
    2,124
    Thanked in
    334 Posts
    Rep Power
    189

    Default

    .thanks to my all brothers for appreciated &love u

    Ummmmmmmaaahh
    وہ بھولی داستاں جو پھر یاد آگئی سچے دھاگوں سے جُڑی اردو فنڈا کی ایک لازوال سٹوری

  16. The Following User Says Thank You to Xhekhoo For This Useful Post:

    abkhan_70 (31-12-2018)

  17. #489
    Join Date
    May 2010
    Posts
    7
    Thanks Thanks Given 
    25
    Thanks Thanks Received 
    2
    Thanked in
    2 Posts
    Rep Power
    10

    Default

    sajjad334 sajjad334 is offline
    Paid Member

    Join Date
    Dec 2009
    Posts
    18
    Thanks Thanks Given
    27
    Thanks Thanks Received
    34
    Thanked in
    17 Posts
    Rep Power
    12
    Default
    Wahh Xhekhoo g zabardast

  18. The Following User Says Thank You to shikra For This Useful Post:

    Xhekhoo (31-12-2018)

  19. #490
    Join Date
    May 2010
    Posts
    7
    Thanks Thanks Given 
    25
    Thanks Thanks Received 
    2
    Thanked in
    2 Posts
    Rep Power
    10

    Default

    واہ شیخو جی بھت اچھا لکھتے ہیں

  20. The Following User Says Thank You to shikra For This Useful Post:

    Xhekhoo (31-12-2018)

Tags for this Thread

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •